Mirza Ghalib Shayari

| |

نقش فریادی ہے کس کی شوخیِ تحریر کا

نقش فریادی ہے کس کی شوخیِ تحریر کا🟦
🟦کاغذی ہے پیرہن ہر پیکرِ تصویر کا

شوخیِ نیرنگ، صیدِ وحشتِ طاؤس ہے🟦
🟦دام، سبزے میں ہے پروازِ چمن تسخیر کا

لذّتِ ایجادِ ناز، افسونِ عرضِ ذوقِ قتل
نعل آتش میں ہے، تیغِ یار سے نخچیر کا🟦

کاؤکاوِ سخت جانی ہائے تنہائی نہ پوچھ
🟦صبح کرنا شام کا، لانا ہے جوئے شیر کا

جذبۂ بے اختیارِ شوق دیکھا چاہیے🟦
سینۂ شمشیر سے باہر ہے دم شمشیر کا

🟦آگہی دامِ شنیدن جس قدر چاہے بچھائے
مدعا عنقا ہے اپنے عالمِ تقریر کا

خشت پشتِ دستِ عجز و قالب آغوشِ وداع🟦
پُر ہوا ہے سیل سے پیمانہ کس تعمیر کا

وحشتِ خوابِ عدم شورِ تماشا ہے اسدؔ
جو مزہ جوہر نہیں آئینۂ تعبیر کا🟦

🟦بس کہ ہوں غالبؔ، اسیری میں بھی آتش زیِر پا
موئے آتش دیدہ ہے حلقہ مری زنجیر کا


Previous

Mohabbat Shayari

Punjabi Shayari

Next
Previous

Mohabbat Shayari

Punjabi Shayari

Next

Leave a Comment